طالبان کی لاشیں خراب نہیں ہوتیں: ریڈ کراس


طالبان کی لاشیں خراب نہیں ہوتی: ریڈ کراس
اتوار, 25 دسمبر,2011 رپورٹ: ڈاکٹر مسلم اندڑ

امریکی ادارے ریڈ کراس کی ویب سائٹ نے غیر ملکی فوجیوں کے مقابلے میں طالبان کے شہدا کے بارے میں ایک رپورٹ نشر کی ہے

مذکورہ ادارہ جو مزار شریف میں مُردوں کوجمع کرنے اور انہیں دفنانے کیڈیوٹی سرانجام دے رہا ہے،نے اس بات پر انتہائی حیرت کا اظہار کیا ہے کہ نہ تو طالبان کی لاشیں خراب ہوتی ہےں اور نہ ہی ان سے بدبو آتی ہے،رپورٹ میں بتایا گیا کہ اُس وقت ماہرین نے اس کی وجہ موسم کے سرد ہونے کو بتایاتھا،مگر ان ماہرین کی رائے اس وقت غلط ثابت ہوئی جب اسی لڑای میں شمالی
اتحاد کے مردوں کو دیکھا گیا جن کی لاشیں گل سڑ گئی تھی اور ان سے سخت قسم کی بد بوآرہی تھی،رپورٹ میں مزید بتایا گیا ہے کہ اب ماہرین اس خوراک کےبارے میں تحقیق کررہے کہ جو طالبان کے فوجی کھاتے ہیں،ماہرین اس بات کی تحقیق بھی کررہے کہ وہ یہ سمجھیں کہ خوراک اور خون کے مابین رشتہ ہے یانہیں،کیونکہ بعض طالبان کا خون موت کے بعد بھی گرم رہتا ہےحوالہ (المصریون،انا المسلم اور دیگر بے شمار ویب سائٹس )اللہ تعالی کا فضل ہے کہ صلیبی فوجیوں کے مقابلے میں طالبان شہدا کی کرامات پر دوستوں سے پہلے دشمن اعتراف کرتے ہیں،کہا جاتا ہے کہ کمال وہ ہوتا ہے جس کا اعتراف دشمن کرے۔

یاد رکھنے کی بات ہےکہ اگر پوری دنیا کی سائنس اور ماہرین جمع ہوجائیں تب بھی وہ طالبان شہدا کی لاشوں کے نہ خراب ہونے کی وجہ کو نہیں ڈھونڈسکتے،انہوں تو نے ابراھیم علیہ سلام کی جسد مبارک کو ڈھونڈنے کی بھی بہت کوششیں کی تاکہ ان کے بدن کے حیاتیاتی خواص سمجھنے سے اپنے فوجیوں کے لئےآتش زدڈھال بناسکے۔

یہاں پر ہمیں استاد یاسر کی وہ گفتگو یاد یاتی ہے جو انہوں نے امارت اسلامیہ کے ایک اہم کمانڈر ملاعبدالمنان رحمہ اللہ کے جنازے کے موقع پرکی۔

میں تمیں اس کے لئے کہ طالبان برحق ہیں اور کابل کی حکومت ناحق ہے کی ایک آسان مثال پیش کرتا ہوں،جسے ہر ایک سمجھ سکتا ہے اور کوئی اس کاانکار نہیں کرسکتا ہے اور وہ یہ کہ کیوں ہمارے مردوں کی لاشیں خراب نہیں ہوتی اور ان سے خوشبو آتی ہے اور جانب مقابل کی فوجیوں کی لاشیں گل سڑجاتی ہیں اور ان سے بد بو آتی ہیں۔

محترم استاد نے اس حالت میں جب ملاعبد المنان کی لاش سے خوشبو مہک رہی تھی کہا کہ میں سب کو چلنج کرتا ہوں کہ وہ آئیں،ایک لاش ہماری جانب سےاور ایک لاش جانب مقابل سے نکالتے ہیں جو ایک ہی وقت میں ایک ہی قسم اسلحے سے مارے جاچکے ہوں ،آدھے گھنٹے کے لئے ایک ہی طرح کی فیزکی اورکیمیاوی حالت میں اسے رکھیں گے،ہم دیکھیں گے کہ ہماری لاش مزید خوب صورت ہوچکی ہوگی اس سے مہک اُٹھ رہی ہوگی اس سے مشک کی خوشبو آرہی ہوگی اورجانب مقابل کی لاش گل سڑ چکی ہوگی اس سے بدبو اُٹھ رہی ہوگی،اب پوری دنیاکے سائنس اور کیمسٹری ماہرین اس کا سبب معلوم کریں کہ ایسا کیوں ہوتا ہے؟

اس بات کو بھی نظر انداز نہیں کرنا چاہی ہے کہ کابل کی کٹھ پتلی انتظامیہ کی صفوں سے بھاگنے کی ایک بڑی وجہ طالبان کے شہدا کی کرامات کو دیکھناہے۔صوبہ ننگرہار کے ضلع غنی خیل میں فوج سے بھاگ جانے والے ایک گروپ کےایک فوجی اپنے بھاگنے کیوجہ بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ طالبان کے ساتھ آمنے سامنے اور دوبدو جنگ میں طالبان نے پسپائی اختیار کی ،درحالکے دونوں
جانب سے لاشیں میدان میں رہ گئی تھیں،ہمیں حکم دیا گیا کہ صبح تک وہاں پرقیام کریں،لیکن بہت ہی کم وقت گزرنے کے بعد ہماری فوجیوں کی لاشوں سےایسی بدبو دار قسم کی بو آنے لگی جس سے وہان ٹھہرنا انسان کے بس میں نہیں تھا،اور دوسر جانب طالبان کی لاشوں سے انتہائی خوبصورت سہ مہلک اُٹھ رہی تھی، تو یہی بات تھی کہ ہمارے ساتھیوں [افغان آرمی] نے اپنا کام شروع کیا
اپنی لاشیں چھوڑ کر طالبان کی لاشوں کے پاس کھڑے ہوگئے،ان بھگوڑے فوجیوں کا کہنا تھا کہ جب صبح ہوئی ہم چند ساتھیوں نے سب کچھ چھوڑ دیاباوجود ہے کہ تنخواہ ملنے میں ابھی دو تین روز باقی تھے اور ہم اپنےگھروں کی طرف بھاگ نکلے۔

روسیوں کے خلاف جہاد میں شہید ہونے والے مجاہدین کی کرامات کے بارے میں نامور عالم دین شیخ عبد اللہ عظام نے ایک اہم کتاب (ایات الرحمن فی جھادالافغان)لکھی ہے جس میں سینکڑوں ایسے واقعات درج ہیں۔

اللہ تعالی کرے کہ اب بھی علماءکرام کوشش کررہےئیں اور صلیبیوں کے خلاف لڑنےوالے مجاہدین کی کرامات کو جمع کریں اور اپنے لوگوں کے سامنے پیش کریں،تاکہ لوگ حق وناحق کو جان سکےں اور حق کی راہ کو اختیار کرسکیں۔

تمام دوستوں سے انتہائی عاجزی کے ساتھ درخوست ہے کہ مجھ گہنگار کے لئےبھی اخلاص کے ساتھ دعا کریں،کہ اللہ تعالی مجھے اپنی راہ میں جہاد کرنے کی توفیق دے اور آخر میں ایسی شھادت نصیب فرمائیں جس کے فضائل حضور ﷺ نےبیان فرمائی اور خود اس کی تمنا بھی کی ہے۔ آمین یا رب الشہداء والمجاہدین۔

Explore Hassan on Net

Interest of Hassan

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s